Call

Residents call on Suffolk and Chesapeake to better handle stormwater runoff | English News | GulNews

[ad_1]

CHESAPEAKE, Va. (WAVY) — Over the last month, 10 On Your Side has been investigating and reporting on stormwater drainage dilemmas in Suffolk. Those issues also flow into the Pughsville neighborhood of Chesapeake.

Suffolk resident Alfonsa Cargill sums it up a certain way.

“We have ditches that have grown up. We have ditches that are totally blocked with nothing flowing through them,” Cargill said.  

We’ve reported on Roosevelt Jones’ home in the Oakland neighborhood of Suffolk. He’s been there for years, but developers built homes next to his property at a higher level. So, all the stormwater flows from the newer homes onto his property.

In our reporting, we’ve shown a video of stormwater flooding Lyman Elliott’s yard in Pughsville. He said if it rains hard for an hour, his yard gets swamped. 

Pamela Brandy, who lives in the Pughsville section of Chesapeake, shot a video of Elliott’s flooded yard, which has become a natural stormwater runoff retention pond during heavy rains.,  

“It’s important because they [Suffolk and Chesapeake] are not doing what they promised to do all along and that is to provide funds to take care of our community, and it’s not being taken care of,” Brandy said.

To that, Chesapeake’s Public Works DirectorEarl Sorey says “We have heard them loud and clear.” 

“We have a number of efforts underway to address that,” he said.

10 On Your Side met Sorey at the John Street outfall improvement project in the Pughsville section of Chesapeake.   

The cost of the project is $890,000, which will bring in bigger pipes to move more water out of neighborhoods downstream to natural wetlands.

“This will allow water to get out more efficiently,” Sorey added.

He describes the stormwater outfall project this way: “We want to clean out the accumulated sediment within the boxed culverts. They are digging down and moving material that is under three feet of water, and that is allowing water to get out and flow more efficiently… and over time, this will improve drainage in this area.”

Sorey also adds that other significant work was done.

“This past winter, we did a lot of maintenance activities on the drainage ditches within the neighborhood making sure they are adequately sloped,” Sorey said. 

That is contrary to the perspective of a group of Suffolk and Chesapeake residents, who say they have not provided the proper drainage and sidewalks.

In July, 10 On Your Side met with the residents who live in older Chesapeake and Suffolk neighborhoods. They said they feel ignored.

“What they had done is allowed builders to build on top of homes and build homes in the community where they are flooding out the older residents,” Brandy said.

That’s what has happened to Roosevelt Jones’s property in Suffolk. 

“They should have made a better improvement from our engineers before they allowed all these houses to be built,” he said.

We asked Suffolk City Manager Albert Moor whether he thought the residents have a legitimate complaint. 

“There is a concern with drainage in the area,” he confirmed.

To Moor’s credit, he has spent time in these communities, and visited Jones’ property, and considers Oakland and Pughsville underserved communities in need of help.

“Look, actions always mean more than what you say,” he told us. 10 On Your Side pointed out they want more action from Suffolk.    

“And we are working there, and we are not trying to give lip service, and we want to work with the residents. We want to bring them a higher quality of life — period,” Moor said.

We also walked the neighborhood with Roosevelt Jones. He looked down his street and started speaking.

“You look all the way down the street.  Here, I’ve been trying to get them to come and clean these ditches out,” he said.

We walked Jones’ neighborhood to see firsthand what the issues are, even when it’s not raining. He pointed to a clogged drain with stormwater in it.

“How is water going to go through here because the water is stopped up? … Look in this one over here. I’ve been trying to tell the city all the water is standing. It is not going anywhere because they won’t come clean the ditches out,” he said.

We met Wayne White, who lives in the Chesapeake part of Pughsville. He got tired of waiting for the city to put in drainage pipes, so he put in his own.

“When my daughter was 3 or 4 years old when we moved here, she walked out of the house, walked right into the ditch. I said it wasn’t going to happen anymore, so I covered up the ditches … at my own cost,” he said.

The neighbors are supported by city activist Kelly Hengler, who documents flooding issues on video and pictures. She was at the first meeting we had in July.

“The reasons we are all here is all the citizens realized vis-a-vis all the civic leagues that, individually, they weren’t being heard… So we banded together,” she said.

For the record, side by side, Suffolk seems to be doing more addressing stormwater issues in underserved neighborhoods: 

Suffolk is spending $5.7 million using $2 million from the American Rescue Plan Act.

Chesapeake is spending $890,000 on the John Street Project plus funds from normal operating budget expenditures which could not be provided to us. There is no budget money from the American Rescue Plan. 

Sorey also gave some news that will not be well received from the residents we spoke to.

“As far as piping, ditches and curbs and gutters, that is not included in our scope of work… It is not included in any type, not at this time,” he said.

We asked whether it should be included.

“It would compete with other city-wide priorities,” Sorey said. 

The residents insist they will continue the fight for more efficient flowing ditches. 

“I am going to take this fight until either Jesus calls me home first, or he comes back first. I don’t care. It doesn’t matter to me I’m going to be here,” Brandy said.



[ad_2]

GUL NEWS

[ad_1]

Call of Duty Vanguard WW2 game leaks, maybe with Zombies | English News | GulNews

[ad_1]

The next Call of Duty game was effectively leaked this week courtesy of some Black Ops Cold War data files. In said files, pre-order data for the next Call of Duty title were discovered. Inside, the name Call of Duty: Vanguard was found, and indications are that this will be a World War II title – because we can never have enough WWII video game action, ever. Oh, and ZOMBIES.

In the leaked images we get to see a few different angles at which this new game will be release. Or, assuming the game isn’t outright cancelled after this leak, we’ll likely see: Standard, Cross-Gen, and Ultimate edition releases. It would not be unheard of for this next release’s set of bundles to mirror those of the otherwise most recent release – Call of Duty: Black Ops Cold War also had very, very similar bundles at launch.

The discovery of the imagery comes courtesy of the Cheezburgerboyz. UPDATE: They’ve now had the imagery removed from Twitter.

Take a peek at the content above and see what you make of it. This might be the start of something just lovely – or it could be a rehash of the same World War 2 games we’ve been playing for the past several decades.

UPDATE: Also, there are zombies. Call of Duty Vanguard Zombies leaked. You can believe this one if you want – or not. It could just as easily be faked as it could be the real deal. It’d be absurd to release a WWII game like this without Zombies – but you never know!



[ad_2]

GUL NEWS

[ad_1]

Not waiting for phone call from Biden, says PM Imran | English News | GulNews

[ad_1]

Prime Minister Imran Khan, in a wide-ranging talk with foreign journalists at his residence on Wednesday night, said he was not really “waiting” for a phone call from US President Joe Biden.

“I keep hearing that President Biden hasn’t called me. It’s his business. It’s not like I am waiting for any phone call,” he said in response to a question from a Reuters journalist.

The prime minister’s comments come days after National Security Adviser Moeed Yusuf stated that Pakistan has other options if Biden continues to ignore the country’s leadership.

“The president of the United States hasn’t spoken to the prime minister of such an important country who the US itself says is make-or-break in some cases, in some ways, in Afghanistan — we struggle to understand the signal, right?” Yusuf had told The Financial Times in an interview.

“We’ve been told every time that … [the phone call] will happen, it’s technical reasons or whatever. But frankly, people don’t believe it,” he had said. “If a phone call is a concession, if a security relationship is a concession, Pakistan has options,” he had added, refusing to elaborate.

During the interaction with the foreign media, the prime minister talked about the current situation in Afghanistan, its impact on Pakistan, and the withdrawal of US troops from the war-torn country.

“The hasty way in which the Americans left, if they wanted a political settlement then common sense dictates that [you negotiate] from a position of strength,” he said, adding that the US was now blaming Pakistan when they no longer had any leverage.

“I think the Americans have decided that India is a strategic partner. Maybe that’s why Pakistan is being treated differently. Pakistan is just considered to be useful only in the context of settling this mess.”

The premier added that Pakistan’s closeness to China was another reason for the change in the US’ attitude.

Fallout in Pakistan

The prime minister stressed throughout the interaction that Pakistan stood to lose the most from a deterioration in the Afghan situation.

“You ask me whether we are worried? We are [definitely] worried because the direct impact of descending into a prolonged civil war […] the country that will be most affected after Afghanistan will be Pakistan.”

He explained that the Taliban were a Pakhtun-majority group and hence there would be spillover effects in Pakistan’s Pakhtun majority areas.

“It happened in 2003/2004 that our Pakhtun areas reacted to what was happening in Afghanistan and Pakistan lost 70,000 people in that because we supported the Americans.

“So there is a likelihood that we will again have problems in our Pakhtun areas,” the premier explained. He added that close to three million people had also been internally displaced from the tribal areas.

Prime Minister Imran Khan pointed out that Pakistan already housed 3 million registered Afghan refugees with more unaccounted for. “Our economy is just recovering [so] we don’t want another inflow of refugees,” he said.

Any civil war in Afghanistan would also derail Pakistan’s plans for connectivity with Central Asia and geo-economic agenda, throwing them “out the window”, the premier highlighted.

He said a “nightmare scenario” for Pakistan would be a protracted civil war in case the Taliban tried to form an exclusive Afghan government through a military takeover.

The premier explained that Afghanistan was an ethnically diverse population so if the Taliban tried to take over and one ethnic group tried to impose itself over the others, it would lead to “constant unrest and that isn’t what Pakistan wants”.

He reiterated Pakistan would be affected by that unrest.

“We have a larger Pakhtun population here in Pakistan than in Afghanistan and they’re probably the most xenophobic people on earth. They fight each other normally but when it’s an outside [force], they all get together.”

Pakistan’s entry in the US-led war on terror in 2001 led to a “civil war in the tribal areas”, the prime minister said, explaining that as a result, the militant organisations formed to wage Jihad against the Soviet Union turned against Pakistan.

“Hence it’s in Pakistan’s interest that there is a political settlement and all factions come [together to form] a government that represents everyone.”

‘Strategic depth’

Responding to a question on the extent of Pakistani influence over the Taliban, the premier said that even back in 2001, when Pakistan had recognised the Taliban government and was “most influential”, the group had still refused to hand over Osama bin Laden.

“So even then Pakistan’s influence was not all-encompassing.”

He said that anyone who thought Afghanistan could be controlled from outside “doesn’t understand the character of the Afghan people”, adding that the people could not be made “puppets”.

“If I was a Pakistani policymaker in the 90s, I would not have encouraged this idea of strategic depth which was Pakistan’s policy at the time.

“It is very understandable because India, seven times the size of Pakistan, was a hostile eastern neighbour and the Pakistani security setup was always worried about facing hostilities on two fronts so there was always an attempt to have a pro-Pakistan government in Afghanistan,” he said.

Prime Minister Imran Khan emphasised that attempting to influence the Afghan government would not work since the Afghan population would not accept it and any perception of being controlled from outside would lead to a loss of credibility.

“Pakistan should work with any government that is selected by the people of Afghanistan.”

Hence, the PTI government’s policy was to engage with all Afghan factions, hold no favourites and have a readiness to work whichever government comes into power.

Attitude of Afghan govt

Prime Minister Imran Khan said he had tried to persuade the senior Taliban leadership during their visit to Pakistan earlier this year to come to a political settlement but they had refused to talk to President Ashraf Ghani.

He said he had suggested an interim government in 2019 before the Afghanistan presidential election but “the Afghan government was very critical about this remark […] Once President Ghani got elected and the Taliban were excluded, it was always going to be a problem from then onwards since he insisted they talk to him while they didn’t recognise him or the elections”.

“Now the Afghan government is extremely critical about Pakistan [and] they think we have some magical powers that we will make the Taliban do whatever we want [them] to do,” the premier said, adding that the Afghan government didn’t realise that Pakistan’s leverage was “minuscule and diminished” since the American withdrawal.

He said it became extremely difficult to persuade the Taliban once the US gave a date for withdrawal and the Afghan government was now blaming Pakistan for the situation in Afghanistan.

“They somehow think Pakistan has supernatural powers [and that] we are a superpower plus which has such power that the 60,000 to 70,000 Taliban can take on 300,00 Afghan government troops with aircraft and modern weapons and somehow we have the power to make them (Taliban) win.”

The prime minister noted that the Afghan government’s posturing was aimed at bringing the US back into Afghanistan.

“They want the Americans to intervene again but they’ve been here for 20 years so what will they do now which they didn’t do in 20 years?” he questioned.

The prime minister reiterated that Pakistan had made it clear “our soil will not be used [for operations in Afghanistan] so that we again get embroiled in an Afghan civil war” and it did not want military bases in its territory.

“As far as I know after [August] 31, the Americans are going to stop all sorts of [operations], even air attacks in Afghanistan,” he said.

[ad_2]

GUL NEWS

[ad_1]

Punjab governor, chief minister call on PM Imran Khan | English News | GulNews

[ad_1]

ISLAMABAD: Punjab Governor Chaudhry Sarwar and Chief Minister Usman Buzdar held separate meetings with Prime Minister Imran Khan during his recent visit to Lahore on Monday, ARY News reported.

During the meeting of PM Imran Khan and Governor Chaudhry Sarwar, the overall situation of Punjab was discussed.

In addition, the governor congratulated Prime Minister on victory in Azad Jammu and Kashmir (AJK) elections.

READ: PM TO ARRIVE IN KARACHI, LASBELA FOR DAY-LONG VISIT

Chaudhry Sarwar apprised PM Khan of the confidence of Pakistanis abroad in the business-friendly policies of the government and said that the Pakistani community abroad would not only participate in the forthcoming Overseas Convention but is also showing great interest to invest in Pakistan.

The governor also paid tribute to the premier for the steps taken by the government for the protection of minorities’ rights and apprised him of the progress made in the ongoing rehabilitation work of the temple at Bhong.

During the meeting between PM Imran Khan and Punjab CM Usman Buzdar, matters pertaining to governance in the province, measures taken for the relief of common man, strategy to curb inflation and hoarding and progress on ongoing development projects were discussed.

READ: MIYAWAKI URBAN FOREST TO MINIMIZE POLLUTION EFFECT IN LAHORE: PM

CM Buzdar apprised the premier of the steps taken to improve the administrative structure of Punjab government, which PM Khan termed satisfactory.

PM Imran Khan was also briefed on the steps to ensure strict implementation of Covid SOPs during Muharram.

The chief minister also briefed the Prime Minister on the progress of construction and restoration work at the temple in Bhong and strategy to further strengthen the protection of minorities.



[ad_2]

GUL NEWS

[ad_1]

Streaming inquiry: MPs call for “complete reset” to “redress the balance” for songwriters | Gul News | In Urdu | PH

Streaming inquiry: MPs call for “complete reset” to “redress the balance” for songwriters

[ad_1]

سٹریمنگ سروسز

اکنامکس آف میوزک اسٹریمنگ انکوائری کی ایک رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ موسیقاروں کو ملنے والی “افسوسناک واپسی” سے نمٹنے کے لئے اس اسٹریمنگ ماڈل کو “مکمل ری سیٹ” کی ضرورت ہے۔

ڈیجیٹل ، ثقافت ، میڈیا اور اسپورٹ (DCMS) کامن سلیکٹ کمیٹی برائے محکمہ گذشتہ سال سے بزنس ماڈل کی جانچ کر رہے ہیں اور یہ کہ گانا لکھنے والوں اور اداکاروں کے لئے ماڈل مناسب ہے یا نہیں۔

آج (15 جولائی) کو جاری کردہ نتائج کو دیکھیں کہ اراکین پارلیمنٹ ایک “اسٹریمنگ کا مکمل ری سیٹ” ترتیب دے رہے ہیں جو “قانون میں شامل ہیں [artists’] کمائی میں منصفانہ حصہ کے حقوق “۔

ڈی سی ایم ایس کمیٹی کی چیئر جولین نائٹ نے کہا: “اگرچہ محرومی ریکارڈ شدہ میوزک انڈسٹری کو نمایاں منافع بخش لایا ہے ، لیکن اس کے پیچھے ٹیلنٹ – اداکار ، گیت لکھنے والے اور کمپوزر کھو رہے ہیں۔

نائٹ نے مزید کہا کہ “جن امور کی ہم نے جانچ پڑتال کی ہے وہ خود ریکارڈ شدہ میوزک انڈسٹری کے ڈھانچے کے اندر بہت زیادہ گہرے اور زیادہ بنیادی مسائل کی عکاسی کرتی ہے۔

“ہمیں مارکیٹ کے کام کرنے کے طریقے کے بارے میں حقیقی خدشات ہیں ، جیسے یوٹیوب جیسے پلیٹ فارم حریفوں اور غیر آزاد میوزک سیکٹر کو بڑے لیبلوں کے غلبے کے خلاف مقابلہ کرنے کے لئے جدوجہد کرنے میں مقابلہ کرنے میں کامیاب حاصل کرسکتے ہیں۔”

اپریل میں ، 150 سے زیادہ فنکار۔ جن میں شامل تھے پال میک کارٹنی، کیٹ بش، ڈیمن البرن، کرس مارٹن، نول گیلغر اور ولف ایلسوزیر اعظم بورس جانسن کو ایک کھلے خط پر دستخط کیے جس سے کہا گیا ہے کہ وہ معیشت کو بہتر بنانے میں مدد فراہم کریں.

نادین شاہ
نادین شاہ ان فنکاروں میں شامل ہیں جنہوں نے ایک نئی محرومی معیشت کے لئے مہم چلائی ہے۔ کریڈٹ: جم ڈیسن / گیٹی امیجز

انکوائری کی سفارشات میں شامل ہیں:

  • حکومت قانون سازی کرے گی تاکہ اداکار آمدنی کے سلسلے میں مساوی معاوضے کے حق سے لطف اٹھائیں
  • حکومت بڑے میوزک گروپوں کے غلبے کے معاشی اثر کے بارے میں پوری مارکیٹ کا مطالعہ کرنے کے لئے مسابقت اور مارکیٹس اتھارٹی کو کیس حوالہ کرے گی۔
  • حکومت کو چاہئے کہ وہ یو جی سی کی میزبانی کرنے والی خدمات کے لئے لائسنس سازی کے انتظامات کو معمول پر لانے ، مارکیٹ میں ہونے والی بگاڑ اور میوزک اسٹریمنگ کی قدر کو بڑھانے کے ل address مضبوط اور قانونی طور پر قابل نفاذ ذمہ داریوں کو متعارف کرے۔

ریڈیو ہیڈ کی ایڈ او برائن، کہنی کی گائے گیاروے، نادین شاہ اور گومزٹام گرے بھی شامل تھے پچھلے نومبر میں انکوائری کے موقع پر فنکارممبران پارلیمنٹ کو یہ بتانا کہ ادائیگی کی ادائیگی “موسیقی کے مستقبل کو خطرہ” بنارہی ہے۔

نئی رپورٹ میں نوٹ کیا گیا ہے کہ “متعدد اداکار جنہوں نے ثبوت دیا وہ دعویٰ کرتے ہیں کہ وہ اور ان کے بہت سے ساتھی بڑے ریکارڈ لیبلز اور اسٹریمنگ سروسز کی حمایت میں کھونے کے خوف سے اس جمود کے خلاف بولنے سے خوفزدہ ہیں”۔

سٹریمنگ
کریڈٹ: المی اسٹاک فوٹو

نئی رپورٹ کے جواب میں ، صنعت کے اداروں نے “انقلابی” نتائج کو سراہا ہے۔ دی میوزک یونین ، آئورس اکیڈمی اور # بروکن ریکارڈ کا مشترکہ بیان
مہم میں رپورٹ میں پیش کردہ تجاویز کو عملی جامہ پہنانے کے لئے حکومت سے “تیز اور مضبوط” کاروائی کا مطالبہ کیا گیا ہے۔

میوزک یونین کے جنرل سکریٹری ، ہوراس ٹربریج نے کہا: “جیسے جیسے ہم سب وبائی امراض کی ہولناکیوں سے ابھرے ہیں ، حکومت کا درجہ بندی کا ایجنڈا پہلے سے کہیں زیادہ اہم ہے۔ ہماری صنعت اپنے گھٹنوں پر کھڑی ہے اور اگر ہم اپنے ثقافتی ورثہ کو برقرار رکھنا چاہتے ہیں ، برطانیہ کے چاروں کونوں میں موقع پیدا کریں اور برطانیہ میں میوزیکل ٹیلنٹ کو برقرار رکھنا ہو تو ہمیں اسٹریمنگ کو ٹھیک کرنا ہوگا اور لاکھوں پونڈ کی بڑی تعداد میں ریکارڈ لیبل برآمد کرنا بند کردیں گے۔ اور بیرون ملک ان کے مالکان۔ “

# بروکن ریکارڈر کے بانی ٹام گرے نے مزید کہا: “رپورٹ شاندار اور مربوط طریقے سے اس پیچھا کو ختم کرتی ہے: میوزک انڈسٹری ایک سنگین مسئلہ ہے۔ منافع بڑھتا جا رہا ہے ، مارجن پہلے سے کہیں بہتر ہیں ، ایک بار قزاقی سے متاثرہ صنعت کی قیمت ایک دہائی کے اندر ہماری زندگی میں نظر آنے والی کسی بھی چیز کو گرہن لگنے کی پیش گوئی کی گئی ہے ، لیکن اداکار اور گیت لکھنے والوں کو پیچھے چھوڑ دیا جاتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ اس سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ جب فنکار اکٹھے ہوجائیں اور ہمارے تجربات اور اپنے ہم عمر افراد کے بارے میں ایمانداری سے بات کریں تو ہمارے سیاستدان آسانی سے حقیقت کو – عوام کو بھی سامنے لاسکتے ہیں۔ یہ دولت مند موسیقاروں کے لئے زیادہ سے زیادہ رقم حاصل کرنے کے بارے میں نہیں ہے ، یہ کہ خرافات کو طویل عرصہ مردہ ہونا چاہئے۔ یہ مستقبل میں قومی خزانے کو محفوظ کرنے کے بارے میں ہے: ہمارا غیر معمولی ، متنوع برطانوی موسیقی کا ہنر۔

آئیورس اکیڈمی کی چیئر کرسپن ہنٹ نے مزید کہا کہ یہ نتائج آج “موسیقاروں اور موسیقی کے تخلیق کاروں کے لئے ایک بہترین دن” بنتے ہیں۔

“یہ کراس پارٹی رپورٹ حکومت کو فائر پاور اور سیاسی مینڈیٹ فراہم کرتی ہے جس میں اسے ہزاروں برطانوی میوزک تخلیق کاروں کے تجارتی ، پیشہ ورانہ اور فنی مستقبل کو محفوظ بنانے اور ان کی اہمیت کو یہاں برطانیہ میں رکھنے کے لئے درکار ہے۔”

گزشتہ سال، یوگیو کے میوزک شائقین کے سروے میں بتایا گیا ہے کہ 77 فیصد جواب دہندگان کا خیال ہے کہ فنکار زیادہ سے زیادہ محصول کے مستحق ہیں محرومی خدمات سے۔

پوسٹ سلسلہ بندی کی انکوائری: اراکین پارلیمنٹ گیت لکھنے والوں کے لئے “توازن کے ازالہ” کے لئے “مکمل ری سیٹ” کرنے کا مطالبہ کرتے ہیں پہلے شائع ہوا NME.

[ad_2]

Source link

‘Call of Duty Warzone’’s Power Grab is the shakeup the stale battle royale needs | Gul News | In Urdu | PH

‘Call of Duty Warzone’’s Power Grab is the shakeup the stale battle royale needs

[ad_1]

میںمجھے یقین نہیں ہے کہ 1988 کی ایکشن مووی کے بارے میں کیا تھا مشکل سے مرنا اس نے مجھے یہ سوچنے پر مجبور کیا کہ نکاٹومی پلازہ پرامن ہوگا ، خاص طور پر دنیا کے قتل یا ہلاک ہونے میں ڈیوٹی آف ڈیوٹی: وارزون. لیکن ، تھوڑا سا سیاحت کا شکار ہونے کے ناطے ، میں نے یہاں پاور گراب کے اپنے پہلے کھیل کے دوران اترنے کی کوشش کی۔

یہ بتانے کی ضرورت نہیں ، ورڈانسک کے وسط میں کھڑی ایمانداری سے بنا ہوا فلک بوس عمارت پر اترنے کے چند لمحوں بعد ، میں فوت ہوگیا۔ قریب قریب “پاور گرفت” میں ، وارزونجدید ترین وقت محدود موڈ میں ، ہر ایک کو مفت ریسان مل جاتا ہے۔ چنانچہ ، میں نے سانس لیا اور دوبارہ ٹاور پر اترا ، جلدی سے دوسری موت کا ارتکاب کیا۔ کللا ، دوبارہ.

پاور گراب ، یہ پتہ چلتا ہے ، ہے وارزون رفتار سے پاور گراب ویڈیو گیم تھریش میٹل ہے۔ پاور گراب ایک طیارہ ہے جو پتھر سے چلنے والے قاتلوں سے بھرا ہوا ہے اور زیادہ روایتی کھیل کے طریقوں کے چھونے والے دستی گن سے نہیں بلکہ مشین پستول کے ساتھ ، پیراشوٹ کی مدد سے ہوائی فضائی ڈاگ لڑائیوں میں مشغول ہے اس سے پہلے کہ لوٹ مار کے ہر آخری سکریپ کے لئے موت سے لڑے۔ زمین.

یو اے وی یا کلسٹر ہڑتال سے – ہر ایک ٹیگ کی مدد سے کھلاڑی طاقتور انعامات حاصل کرنے کے ل fallen گرنے والے دشمنوں سے کتے کے ٹیگ پکڑ سکتے ہیں ، اور نہ صرف یہ کہ اگر آپ کے پاس ریسپین ٹوکن موجود ہے تو ، آپ موت کے وقت بھی گواہ نہیں ہوسکتے ہیں ، ہتھیاروں اور آپ چار ہتھیار بھی لے سکتے ہیں ، شاید ، آرنی کی طرح دیکھ رہے ہوں کمانڈو جب آپ جنگ میں بھاگتے ہیں۔

کال آف ڈیوٹی بلیک اپس سرد جنگ اور وار زون کے 80 کی دہائی کا ایکشن ہیرو ایونٹ
کال ڈیوٹی بلیک اوپس سرد جنگ اور وار زون کے 80 کی دہائی کا ایکشن ہیرو ایونٹ۔ کریڈٹ: ایکٹیویشن

موڈ گلگ کو کاٹتا ہے اور کھیل کے لوڈ آؤٹ ڈراپس کو دور کرتا ہے ، دوسرا امکانات اور کھیل کے اختتام پر غلبہ حاصل کرنے کے لئے آپ کے تیار کردہ میٹا ہتھیاروں کو پکڑنے کا موقع ختم کرتا ہے۔

ان سب چیزوں کو ایک ساتھ رکھیں اور ایسا محسوس ہوتا ہے جیسے ٹیمپو کرینکل ہو کر لڑائی کا ریلے کھیل رہے ہو۔ اور یہ بالکل وہی ہے جو تھکا ہوا احساس ہے وارزون ایک حیرت انگیز ورڈنسک ’84 لانچ کے بعد درکار ہے۔ باسی گیم پلے کا تدارک کرنے کے لئے یہ بازو میں ایک شاٹ ہے جو ساتھ میں تھوڑا سا تھکا ہوا محسوس ہوتا ہے خوش قسمتیمسلسل کٹوتی اور بدلاؤ اور زلزلہ کی مستقل شفٹ جو وقت کی پابندی کرتے ہیں اپیکس کنودنتیوں.

پاور گراب میں نقشے کے سائز کم ہونے کی وجہ سے لڑائیاں بہت تیزی سے شروع ہوتی ہیں ، اور چونکہ آپ لوٹ مار کرنے کی بجائے جلد لڑائیوں میں پھنس جاتے ہیں ، لہذا یہ جھگڑا کھردرا محسوس ہوتا ہے اور اس سے زیادہ سخت لڑائی ہوتی ہے۔ دریں اثنا ، کھلاڑیوں کو طویل فاصلے سے لڑنے سے حوصلہ شکنی کی جاتی ہے ، کیوں کہ جب یہ آپ کو خطرہ دور کرنے کا فائدہ دیتا ہے تو ، 200 میٹر پر دشمن کو پاپ کرنے سے ان کے قیمتی کتے کا دعوی کرنے کا کوئی واضح راستہ باقی نہیں رہتا ہے ، اور اس طاقت کا جو اس سے فائدہ اٹھاتا ہے۔ مختصر سے درمیانی حد کی لڑی واپس آ گئی ہے۔ اور مجھے یہ پسند ہے۔

اس کے نتیجے میں ، دشمن ایک دوسرے کی طرف بڑھتے ہیں ، اور آپ اکثر لڑائی میں صرف تیسرا فریق نہیں ہوتے ہیں ، بلکہ چوتھا – یا پانچواں بھی ہوتے ہیں۔ جلد ہی آپ نے کسی جیپ کو راکٹ سے ٹکرانا اس سے کہیں زیادہ ہے کہ باہر کی طرف آنے والے کھلاڑی دور چھت پر پچھلے نظر نہ آنے والی مشین گنر نے اسپرے کردیا۔

وارزون
کال آف ڈیوٹی: وارزون۔ کریڈٹ: ایکٹیویشن

یہ ریبرنتھ کے قطبی مخالف ہے ، جو ایک وقت کے لحاظ سے قابل ہے وارزون اگر آپ ٹائمر ختم ہونے تک زندہ رہتے ہیں تو آپ کا اسکواڈ آپ کو دوبارہ اٹھانے دیتا ہے۔ پنرپیم ، جو بار بار ٹمٹماہٹ کرتی ہے اور لوٹتے دشمنوں سے بھرے آسمان کو دیکھتی ہے ، دفاعی کھیل کی حوصلہ افزائی کرتی ہے۔ پاور گراب تمام جرم ہے ، جس سے کھلاڑیوں کو لگاتار دھکیلنا پڑتا ہے۔

یہ آخری دائرے کے مقابلے میں کبھی زیادہ سچ نہیں ہے ، جو نقشے پر ایک ناممکن طور پر چھوٹے زون کی نشاندہی کرتا ہے – اتنا چھوٹا ہے کہ میں نے انتہائی گھبراہٹ کی آواز میں کہا تھا “گیس اتنی چھوٹی نہیں ملے گی ، کیا وہ ایسا کرے گا؟” – اس سے پہلے کہ ایک ہیلی کاپٹر کے ساتھ پوائنٹ پر ایک جھنڈا گرایا گیا تھا۔ اگر آپ نقطہ پر قبضہ کرسکتے ہیں تو آپ کو فتح مل جاتی ہے۔ اس مقام پر اب بھی زندہ باقی ہر شخص ، سمجھنے کے قابل نہیں ، اس نتیجے کا اتنا گہرا نہیں ہے ، لہذا ایک بہت بڑی فائر فائٹ اکثر اس کی لپیٹ میں آتی ہے۔

میں پر مشہور خوفناک ہوں وارزون، اور زیادہ تر ڈھیلے واقف کاروں کی وجہ سے کھیلتے رہتے ہیں جو واٹس ایپ گروپ کے آس پاس ہر رات اسے کھیلنے کے ل co جمع رہتے ہیں ، لیکن پاور گراب لڑائی روئیل فارمولے پر دوبارہ غور کرنے کی طرح محسوس ہوتا ہے جس سے کھیل شدید اور دلچسپ محسوس ہوتا ہے۔ مجھے امید ہے کہ ڈویلپرز ریوین سافٹ ویئر کو احساس ہے کہ ان کے پاس کیا ہے اور اسے طویل مدتی کے آس پاس رکھیں۔



[ad_2]

Source link

FILA launch official ‘Call Of Duty’ ‘80s crossover collection | Gul News | In Urdu | PH

FILA launch official ‘Call Of Duty’ ‘80s crossover collection

[ad_1]

ایک نیا FILA لباس جمع ہے ان کی ویب سائٹ پر شائع ہوا، سے آراستہ کال آف ڈیوٹی: وارزون اور بلیک آپریشنز ورڈانسک ’84 لوگو۔

مداحوں نے پہلے ہی کھیل کے اندر ہی ایف آئی ایل اے لوگو کو نوٹ کیا تھا ، جس نے سن 1984 میں اس کا سیزن 3 فائنل طے کیا تھا۔ ریڈڈیٹ دوسرے پروڈکٹ کی جگہوں اور ممکنہ کراس اوور سے زیادہ

نئی ایف آئی ایل اے مجموعہ میں دو ٹی شرٹ کی مختلف حالتیں ، نیلے رنگ کا ٹریک سوٹ اور بیس بال کی ٹوپی پیش کی گئی ہے۔ ہر ایک کے لئے ایک ٹھیک ٹھیک سرقہ ہے کال آف ڈیوٹی اس کے بجائے ، لوگو کی زینت بننے کی بجائے۔ کچھ کے کندھوں کے ساتھ “ورڈینسک ’84 ‘ہے ، جبکہ کچھ” آپ کی تاریخ جانتے ہیں “۔

کے مطابق کال آف ڈیوٹی ٹویٹر پیج، ایک سوشل میڈیا تحفہ 31 مئی تک چلے گا ، جس میں چار مداحوں کو ایک مکمل ٹریک سکاٹ جوڑی فراہم کی جائے گی۔

یہ پہلا موقع نہیں ہے جب ایف آئی ایل اے نے تعاون کیا ہو کال آف ڈیوٹی. 2020 میں ، انہوں نے فیس بک کا ایک مقابلہ چلایا جس کے آغاز کا جشن تھا وارزون۔ فاتحین کو £ 150 ، کھیل کی تین کاپیاں اور کچھ سے نوازا گیا جدید جنگ ایڈیشن نائٹ ویژن چشمیں۔

کال آف ڈیوٹی 80s کو ایک سے زیادہ طریقوں سے منا رہا ہے ، متعارف کروا رہا ہے ایکشن ہیرو ایونٹ جس میں ریمبو اور جان میک کلین شامل ہیں.

کل (20 مئی) کو شروع ہونے والے 80 کے ایکشن ہیروز ایونٹ نے محدود وقت کے بنڈلوں اور گیم کے طریقوں کے ساتھ ساتھ فیچر ہتھیاروں اور نقشوں کی بھی شروعات کی ہے جو سیزن کے دوران متوقع متوقع ہیں۔



[ad_2]

Source link

Listen to Florence + The Machine’s new song ‘Call Me Cruella’ | Gul News | In Urdu | PH

Listen to Florence + The Machine's new song ‘Call Me Cruella’

[ad_1]

فلورنس + مشین اس نے اپنا نیا گانا ‘کال می کروئلا’ شیئر کیا ہے – آپ اسے نیچے سن سکتے ہیں۔

ٹریک کو آنے والے نئے کے لئے تشکیل دیا گیا ہے ڈزنی فلم کریلا، جس میں ایما اسٹون نے ٹائٹلر کردار کی حیثیت سے ستارہ کا مظاہرہ کیا ہے اور 28 مئی کو ریلیز کے لئے تیار ہے۔

‘کال می کروئلا’ ، جو آپ ذیل میں سن سکتے ہیں ، مووی میں نیز اس کے ساتھ ساتھ اصل موشن پکچر ساؤنڈ ٹریک اور اصل اسکور البم (کمپوزر نکولس برائٹل کے ذریعہ سنجیدہ ہے) پر نظر آئیں گے۔

انہوں نے کہا ، “میں نے پہلے گانے میں سے کچھ ڈزنی گانے ، گانے سیکھنے کے بارے میں سیکھا تھا۔ ویلن کو گانے کے بارے میں ایک بیان میں کہا گیا کہ اور اکثر ھلنایک بہترین نمبر حاصل کرتے ہیں۔ “لہذا اس کے لئے ایک گانا بنانے اور پرفارم کرنے میں مدد کریں کریلا بچپن کے ایک طویل خواب کی تکمیل ہے۔

https://www.youtube.com/watch؟v=ON2_e1HB1JM

“میں نیکولس برائٹیل اور ڈزنی کا بہت شکر گزار ہوں کہ انہوں نے مجھے اتنی تخلیقی آزادی کی اجازت دی ، اور مجھ پر کروئلا کی خوبصورت پاگل پن سے اعتماد کیا۔”

برائٹیل نے مزید کہا: “میں فلورنس کا بڑے پیمانے پر مداح ہوں ، لہذا ‘کال می کروئلا’ کے نام سے اس کے ساتھ تعاون کرنا ایک حقیقی خوشی کی بات تھی۔ اس گیت اور کریلا خود ہی اسکور کریں ، اس کا مقصد 60 اور 70 کے لندن کے خام چٹان کو جمالیاتی انداز میں قبول کرنا تھا۔

“ہم نے لندن میں ایبی روڈ اور ایئر اسٹوڈیو میں تمام ونٹیج گیئر اور ینالاگ ٹیپ کا استعمال کرتے ہوئے ہر چیز کو ریکارڈ کیا ، الیکٹرک گٹار اور باسس ، اعضاء ، کی بورڈز اور ڈرم والے آرکیسٹرل عناصر کو میلڈ کیا ہے۔”

پچھلے مہینے اس کی تصدیق ہوگئی ویلچ ایک نیا براڈوے موافقت اسکور کرے گا عظیم گیٹس بی.



[ad_2]

Source link